24  فروری‬‮  2018
تازہ ترین

خطرہ خطرہ خطرہ ۔۔۔ لاہور میں خوفناک مرض نے قدم جمالیے ، شہریوں کو ہدایات جاری کردی گئیں

خطرہ خطرہ خطرہ ۔۔۔ لاہور میں خوفناک مرض نے قدم جمالیے ، شہریوں کو ہدایات جاری کردی گئیں
خطرہ خطرہ خطرہ ۔۔۔ لاہور میں خوفناک مرض نے قدم جمالیے ، شہریوں کو ہدایات جاری کردی گئیں
لاہور (نیوز ڈیسک/علینہ) پنجاب صوبائی دارالحکومت لاہور میں انفلوئنزا وائرس ایچ ون این ون سوائن فلو کا پہلا کیس سامنے آگیا۔ لاہور کے نجی ہسپتال میں زیرعلاج 70 سالہ رشیدہ بی بی میں سوائن فلو کی تصدیق ہوگئی ہے۔ ٹیسٹس اور میڈیکل رپورٹس کے بعد نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ اسلام آباد نے رشیدہ بی بی

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

میں سوائن فلو کی تصدیق کی۔ ذرائع کے مطابق رشید بی بی کو 28 دسمبر کو شدید بخار کی حالت میں نجی ہسپتال لایا گیا تھا۔واضح رہے کہ سوائن فلو کا وائرس خنزیر کے ذریعے پھیلتا ہے‘ یہ انفلوئنزا وائرس کی ایک قسم H1N1 کہلاتا ہے جو انسانی جسم میں داخل ہو کر اس کے مدافعتی نظام کو کم زور کردیتا ہے۔ طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ سوائن فلو کسی بھی عمر کے فرد کو لاحق ہوسکتا ہے، لیکن حاملہ عورت، دو سال سے کم عمر بچے، فربہ اور سانس یا دل کی بیماری میں مبتلا افراد کے متاثر ہونے کا امکان زیادہ ہوتا ہے۔ سوائن فلو متاثرہ افراد کے کھانسنے یا چھینکنے سے دوسرے انسان کو منتقل ہوسکتا ہے۔ جبکہ دوسری جانب جنوبی پنجاب کے بعد لاہور میں بھی سوائن فلو کے 14 انتہائی مشتبہ مریضوں کا انکشاف ہوا ہے، یہ شہر کے مختلف سرکاری و نجی ہسپتالوں میں زیر علاج ہیں، ان کے نمونے تصدیق کیلئے نیشنل انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ لیبارٹری بھجوا دیئے گئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق 2017 -2108 میں اب تک سوائن فلو ایچ ون این ون انفلوانزا کے 56 کیس رپورٹ ہو چکے ہیں، جن میں اب تک 54 کیسز کی رپورٹ نیگٹیو آئی ہے جبکہ دو مریضوں میں سوائن فلو کا وائرس پازیٹو آیا ہے، جس میں ایک مریضہ 70 سالہ رشید ہ بی بی انتہائی سیریس حالت میں،

نجی ہسپتال میں موجود ہیں اور ان کا علاج معالجہ جاری ہے جبکہ رواں سال میں سوائن فلو کی شدت میں دن بدن تیزی آ رہی ہے اور صرف جنوری کے 9 دنوں میں اب تک 20 مشتبہ کیس رپورٹ ہو چکے ہیں جس میں ابھی سوائن فلو کے 14 مشتبہ مریض مختلف سرکاری و نجی ہسپتالوں میں زیر علاج ہیں جن میں ڈاکٹرز ہسپتال میں چار، شیخ زید ہسپتال میں ایک، فاروق ہسپتال میں ایک، جناح ہسپتال میں ایک، سروسز میں ایک، فاطمہ میموریل میں ایک، حمید لطیف میں ایک، گلاب دیوی میں ایک اور اتفاق ہسپتال میں ایک مریض زیر علاج ہے جن کے نمونے تصدیق کیلئے اسلام آباد کی لیبارٹری نیشنل انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ میں بھجوائے گئے ہیں۔ 2016 میں سوائن فلو سے تین اموات ہو چکی ہیں۔ اس حوالے سے ڈی جی ہیلتھ پنجاب ڈاکٹر اختر رشید کا کہنا تھا کہ شہر کے تین بڑے ہسپتالوں کو فوکل ہسپتال بنا دیاگیا ہے جن میں سروسز، میو اور گنگا رام ہسپتال شامل ہیں جبکہ تمام ٹیچنگ ہسپتالوں میں ائسولیشن وارڈ اور سوائن فلو کائونٹر بھی قائم کر دیئے گئے ہیں جبکہ تمام چھوٹے بڑے ہسپتالوں میں سوائن فلو سے بچاؤ کی ادویات اور ویکسینیشنز کا وافر سٹاک موجود ہے اور ہسپتال انتظامیہ کو ہدایت بھی جاری کردی گئی ہے کہ تمام ہائی رسک سٹاف کی ویکسینیشنز کی جائے اور ہسپتال میں آنے والے تمام مریضوں کو بہترین طبی سہولیات فراہم کی جائیں۔

انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مین
loading...